ٹوئٹر بالآخر منافع میں چلا گیا

488

ملازمین کے اخراج، کام پر زیادہ توجہ اور ہو سکتا ہے کسی حد تک ڈونلڈ ٹرمپ بھی کام آئے ہوں، نتیجہ نکلا کہ بالآخر ٹوئٹر منافع میں چلا گیا۔

جی ہاں! ٹوئٹر نے اپنی پہلی منافع بخش سہ ماہی کا اعلان کیا ہے حالانکہ وہ چار سال سے اسٹاک مارکیٹ میں موجود ہے۔ لیکن 2017ء کی چوتھی سہ ماہی پہلا موقع ہےکہ جس میں ادارے نے 91 ملین ڈالرز کا منافع ظاہر کیا ہے۔ اسٹاک مارکیٹ میں ادارے کے حصص میں 14 فیصد سے زیادہ اضافہ دیکھنے کو ملا ہے۔

البتہ ٹوئٹر صارفین میں ماہانہ اضافہ نہیں دیکھا گیا۔ ٹوئٹر کے ماہانہ 300 ملین متحرک صارفین ہیں، جو گزشتہ سہ ماہی جتنے ہی ہیں۔ لیکن اس نے روزانہ کے متحرک صارفین میں سالانہ 12 فیصد اضافہ ضرور حاصل کیا ہے۔

سی ای او جیک ڈورسی نے کہا ہے کہ "چوتھی سہ ماہی سال کا بہترین اختتام تھا۔ ہم منافع میں آئے اور اپنا ہدف حاصل کیا اور ساتھ ہی روزانہ کے متحرک صارفین میں اضافے میں مسلسل پانچویں سہ ماہی میں اضافہ کیا۔ مجھے 2017ء میں ہونے والے پیشرفت کی خوشی ہے اور آگے کے سفر کے لیے اعتماد ملا ہے۔”

ٹوئٹر کی آمدنی 732 ملین ڈالرز رہی جو ماہرین کے اندازے 686 ملین سے زیادہ ہے۔ جس میں سے 91 ملین ڈالرز منافع ہے۔ منافع میں آنا ٹوئٹر کے لیے اتنا آسان نہیں تھا، اپنے ملازمین کو نکالنا پڑا، مشہور ایپ ‘وائن’ کو بند کرنا پڑا اور اپنے ڈیولپمنٹ پلیٹ فارم ‘فیبرک’ کو گوگل کے ہاتھوں بیچنا پڑا۔ بہرحال، امید ہے کہ یہ ایک روشن مستقبل کی پہلی کرن ہوگی۔

تبصرے
لوڈنگ۔۔۔۔
error: اس ویب سائٹ پر شائع شدہ تمام مواد کے قانونی حقوق بحق ادارہ محفوظ ہیں