کیا آپ کو شوگر ہے؟ ابھی اسمارٹ واچ سے جانیں

770

کیا آپ کو ذیابیطس ہے؟ یہ جاننا اب بالکل آسان ہو سکتا ہے، اتنا آسان جتنا کلائی پر گھڑی باندھنا۔

کارڈیوگرام میں ہونے والی ایک تحقیق ظاہر کرتی ہے کہ ایپل واچ جیسے ویئریبلز کے ہارٹ ریٹ مانیٹر کو استعمال کرکے نیورل نیٹ ورکس اندازہ لگا سکتے ہیں کہ کیا پہننے والے میں ذیابیطس کی ابتدائی علامات تو موجود نہیں؟ اور اب یہ اندازے بہت حد تک درست ثابت ہوئے ہیں۔

طبی محققین بہت عرصے سے شوگر کی سطح جاننے کے لیے ایسے طریقے تلاش کر رہے ہیں جس میں سوئی چبھونے یا خون نکالنے کی ضرورت نہ ہو۔ ابھی تک وہ اس منزل تک پہنچے تو نہیں لیکن حالیہ تحقیق نے کچھ حوصلہ افزاء نتائج پیش کیے ہیں۔ امریکا میں 100 ملین سے زیادہ افراد ذیابیطس کا شکار ہیں یا ہونے والے ہیں اور زیادہ پریشان کن بات یہ ہے کہ ذیابیطس کے حامل ہر چار میں سے ایک فرد کو یہ علم ہی نہیں کہ وہ اس مرض کا شکار ہے۔

یہ نتائج یونیورسٹی آف کیلیفورنیا، سان فرانسسکو کے ساتھ کارڈیوگرام کی ڈیپ ہارٹ تحقیق کا حصہ ہیں۔ کمپنی نے 14 ہزار ایپل واچ صارفین کے ڈیٹا کو استعمال کرتے ہوئے الگورتھمز کے ذریعے 462 افراد میں ذیابیطس کی تشخیص کی۔

یہ طریقہ دیگر ویئریبلز کے ساتھ بھی استعمال کیا جا سکتا ہے جیسا کہ اینڈرائیڈ ویئر ڈیوائسز، گارمن گھڑیوں اور فٹ بٹس کے ساتھ، جن میں ہارٹ ریٹ مانیٹر ہوتا ہے۔ ذیابیطس اور اس سے قبل علامات کی جلد تشخیص سے فوری علاج شروع ہو سکتا ہے اور ممکنہ مریض ایک صحت مند زندگی گزار سکتا ہے۔

کارڈیوگرام کے بانیوں کا کہنا ہے کہ وہ ہارٹ ریٹ مانیٹر کے ذریعے دیگر امراض کی تشخیص پر بھی تجربات کر رہے ہیں۔ البتہ کمپنی کا کہنا ہے کہ اس وقت یہ تحقیقی مرحلے میں ہے اس لیے اگر آپ کو لگتا ہے تو آپ کو ذیابیطس ہے تو ایپل واچ پر انحصار کرنے کے بجائے فوری طور پر ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

تبصرے
لوڈنگ۔۔۔۔
error: اس ویب سائٹ پر شائع شدہ تمام مواد کے قانونی حقوق بحق ادارہ محفوظ ہیں